Skip to content

اعتڪاف لاء ضروري هدايتون

هي رحمتن ۽ برڪتن وارو مهينو ٻي ڏهاڪي جي پڄاڻي تي آهي ، جنين ڀائرن ۽ ڀينرن پنهنجي روحاني ارتقاء لاء ڏينهن روزن ۽ راتيون قيام اليل ۾ گذاريون سي يقينن هاڻي اعتڪاف جي تيارين ۾ هوندا ، بس پوء جنهن جنهن جي نصيب ۾هي ڀلاريون برڪتون هونديون سي بحيثيت معتڪف رب جا مهمان بڻبا .
جيئن ته انکان پهريان مان اعتڪاف جي حقيقت ۽ انجي طريقي سان وابسته ٻه مضمون لکي چڪو آهيان ۽ هي تحرير اعتڪاف سان وابسته ڪجهه ضروري هدايتن ۽ مختصر فلسفي تي مشتمل آهي ،
اڄ ڪلهه اعتڪاف جو رجحان نئين ٽهي ۾ اڪثريت سان نظر اچي رهيو ، ۽ اها خوش آئنده حالت آهي ليڪن انکان به انڪار ناهي ته ان ۾ اڪثريت اهڙن نوجوانن جي آهي جيڪي عام مهينن ۾ قرآن ۽ نماز سان ويجهڙائي گهٽ اختيار ڪن ٿا .
۽ نتيجتن انهن کي اعتڪاف جي اصل حقيقت مرتبي ە۽ مقصد جو صحيح اندازو ناهي هوندو  لحاظا اعتڪاف جي مقصد ۽ ان سان وابسته ضروري هدايتن کي سمجهندا هلون ته جيئن وڌ کان وڌ رحمتون برڪتون حاصل ڪري سگهون .

اعتڪاف جو مقصد

نبي پاڪ صلي الله عليه وسلم  جن جي پيروي ڪندي اسان رمضان جي آخري ڏهن ڏينهن ۾ ڪنهن مسجد ۾ ترسندا آهيون ته جيئن اسان هڪ مخصوص رات کي ڳولي سگهون جنهن کي شب قدر يا قدر واري رات چئبو آهي

شب قدر جو خاصيتون :
۱ . ان رات قرآن مجيد نازل ٿيو
۲ . هي رات هزار مهينن کان ڀلاري آهي
۳ . ان رات روحون ۽ ملائڪ نازل ٿيندا آهن
۴ . هي رات فجر تائين سلامتي واري آهي
مٿي ڏنل چار نڪتا درحقيقت سوره القدر مان ورتل آهن پهريون نڪتو ان خاص نسخي ۽ نور جي طرف واضع اشارو آهي جنهن کي الله تنارڪ وتعالي تمام انسانن جي لاء
هدايت قرار ڏنو آهي ڄڻ ته اهائي ان رات جي عظمتن جي اصل وجهه آهي جو پروردگار عالم پنهنجي بندن جي هدايت لاء نور نازل ڪيو
هاڻي اچو ته ٻي نڪتي کي سمجهون جيڪڏهن اسان هزار مهينن کي منتقل ڪريون ته اهي ۸۳ سال ۴ مهينا ٿيندا ، ڄڻ ته صرف هڪ رات عبادت ڪرڻ ۸۳ سالن جي برابر ٿي ويئي جيڪا اڄ ڪلهه جي عام زندگي کان به ۲۳ سال وڌيڪ آهي
وري جيڪڏهن ان کي ڪلاڪن ۾ منتقل ڪجي ته اهي ۷۲۰۰۰ (ست لک ويهه هزار) ڪلاڪ ٿيا . مثال جي طور تي هڪ روحاني شاگرد جيڪڏهن بحالت مراقبه پنهنجي روح کي هڪ ڪلاڪ ۾ ۱۰۰۰ مشاهدن مان گذاري ٿو ته ان رات ان جي روح ۶۰۰۰۰ مشاهدن مان گذري ٿي .
عام رات ۾ (۱۰۰۰ مشاهدا في ڪلاڪ )
قدر واري رات ۾ (۶۰۰۰۰ مشاهدا في ڪلاڪ )
ڄڻ ته روح جي رفتار عام راتين جي مقابلي ۾ ۷۲۰۰۰۰ڀيرا تيز ٿي ويندي آهي .

هاڻي ٽئين نڪتي جي طرف اچون جيڪو ان رات کي سمجهڻ جي نشاني جي طور تي ڪم ڪري ٿو منهنجو مقصد هرگز ۽ هرگز اهو ناهي ته ڪو اهو نڪتو صرف ۽ صرف ان رات کي سڃاڻڻ لاء آهي درحقيقت انهن ڀائرن ۽ ڀينرن لاء جيڪي ان رات جي تلاش لاء اعتڪاف ۾ ويٺا آهن صرف ۽ صرف انهن لاء اهو نڪتو نشاني جي طور تي ڪم ڪري ٿو ته جيئن اعتڪاف جي حالت ۾ ٻڌايل راتين مان جنهن رات به هو ملائڪن ۽ روحن جي آمدورفت ڏسن ته انهن کي پنهنجي عبادت ۾ اڃان به وڌيڪ مشغول ٿي وڃڻ گهرجي ، اتي اها ڳالهه به ذهن نشين ڪري ڇڏڻ گهرجي ته عام نوجوان جي روحاني ارتقاء خاص نه هوندي آهي تنهن ڪري کيس ٻڌايل راتين مان هر رات عبادت ۾ گذارڻ گهرجي ان طرح سان جيڪا رات به قدر جي هوندي انشاءالله انکي سندس عبادت جو اجر ۽ ثواب نصيب ٿي ويندو .
اعتڪاف جي اهميت ۽ مقصد جي مختصر وضاحت کانپوء هاڻي ڪجهه ضروري هدايتن کي به سمجهي وٺون ته جيئن الله تبارڪ و تعالي جي گهر جو تقدس به فرقرار رهي ۽ اسان پنهجي مقصد م ڪامياب ٿي سگهون

ضروري هدايتون :
هڪ اهڙي مسجد جو انتخاب ڪيو وڃي جيڪا گهر کي ويجهي هجي اهو فرض ۾ شامل ناهي محض احتيات جي شڪل ۾ ته جيئن توهان ضرورت آهر پنهنجي گهروارن سان سولو رابطو ڪري سگهو ۽ گهر ويجهو هئڻ جي صورت ۾ سحر و افطار لاء فڪر رهندي
پاڻ سان گڏ ڪپڙن جا هڪ ٻه جوڙا پاڪ صاف ضرور رکجن ته جيئن بوقت ضرورت انهن کي استعمال ۾ آڻي سگهجي
مسجد ۾ چادر ٻڌي ان پويان اعتڪاف ڪرڻ سنت ۾ شامل آهي لحاظا اعتڪاف ۾ وهڻ کان پهريان ئي مسجدجي انتظاميا سان رابطو ڪري وٺجي ته جيئن چادر جو احتتمام آساني سان ڪري سگهجي
عبادت جي سلسلي ۾ ڪنهن بزرگ سان مشورو ڪري وٺجي .
اعتڪاف جي حالت ۾ موبائل جي استعمال کان پاسو ڪيو وڃي ته جيئن ڪنهن جي به عبادت ۾ رخنو نه پوي
فارغ اوقات آرام يا ذڪر و فڪر يا درود پاڪ پڙهڻ ۾ گذارجن ۽ لغو ڳالهين ۽ ڪچهرين کان پاسو ڪجي
پنهنجي توجه هروقت رب العالمين جي طرف رکجي
مٿي گذريل ڳالهين کي ذهن ۾ رکندي ڳا ڪنهن عالم کان مڪمل ڄاڻ حاصل ڪرڻ کانپوء ئي اعتڪاف ۾ وهندا ته يقينن اهو عمل توهانجي لاء نهايت بابرڪت ثابت ٿيندو پاڻ سان گڏوگڏ پنهنجي والدين ۽ تمام مسلمانن جي خيروبرڪت لاء دعا ڪرڻ نه وساريندا

Advertisements

اعتکاف کا آسان کورس

اس سے قبل رمضان المبارک کے حوالے سے میں ایک تحریر شایع کر چکا تھا ، جس کا اعنوان تھا اعتکاف کا طریقہ ، وہ ایک کوشش تھی اعتکاف کی حقیقت کو جاننے سمجھنے اور اس پر عمل پیرا ہوکر اپنی روحانی شخصیت کو اس لائق بنانے کی کہ جب شبِ قدر کو فرشتوں اور روحوں کی آمدورفت شروع ہو تو ہم انکی زیارت کر سکیں ان سے مصافحہ کرسکیں اور تجلی الاہی کے دیدار سے بھی مشرف ہو سکیں ۔ لیکن بعد ازان کچھ دوستوں کی  آراء نے مجبور کردیا کہ ایک اور تحریر بھی آپکی نظر کروں تاکہ وہ بہائی اور دوست جو اتنی محنت کے لئے آمادہ نہیں ہیں لیکن اعتکاف کی فیوض و برکات سے بحرمند بھی ہونا چاہتے ہیں انکے لئے کوئی سہل کورس ترتیب دوں ۔
لحاظا میں اللہ تبارک و تعالیٰ سے دعا کرتا ہوں کہ یہ آسان کورس ہر مسلمان بہائی اور بہن کو اعتکاف  کی رحمتوں اور برکتوں سے مالا مال فرمائے

۲۰ روزے کی شام عصر نماز کے بعد باوضو قبلہ رخ بیٹھ جائیں اب ہاتھوں کو دعا کے انداز میں اٹھائیں اور ایک مرتبہ یَا حَفیظ پڑہ کر ہاتھوں پر دم کریں اور ہاتھوں کو تین بار چہرے پر پھیریں (یہ ایک دور ہوا اس طرح کے ٹوٹل تین دور کریں  ) اب 10 روپے خیرات کردیں ۔

۲۱ روزے کی تراویح کے بعد روزانہ رات کو سونے سے قبل
۹۳ مرتبہ یا حمید پڑھیں
۱۰۰ مرتبہ درود خضری
۳۰۰ مرتبہ یا ماجد
۳۱۳ مرتبہ  درود زیارت

اس کے بعد تھوڑی دیر کے لئے اسی جگھ سوجائیں۔ نیند سے جاگنے کے بعد
اللہ تعالیٰ کی رضا حاصل کرنے کے لئے ۲ رکعت نفل ادا کریں ، نماز سے  فارغ ہو کر ایک مرتبہ سورہ یاسین پڑھیں اور دعا کریں۔
رسول اللہ ﷺ کو ثواب کا تحفہ دینے کی نیت سے  ۲ رکعت نفل ادا کریں ، نماز سے  فارغ ہو کر ایک مرتبہ سورہ یاسین پڑھیں اور دعا کریں۔

ہمارے جتنے بھی مسلمان بہائی اور بہنیں اس دنیا سے رخصت ہوچکے ہیں انکی بخشش کے لئے ۲ رکعت نفل ادا کریں ، نماز سے  فارغ ہو کر ایک مرتبہ سورہ یاسین پڑھیں اور دعا کریں۔
اپنے گناہوں کی بخشش کے لئے اپنے مقاصد کے لئے ۲ رکعت نفل ادا کریں ، نماز سے  فارغ ہو کر ایک مرتبہ سورہ یاسین پڑھیں
اور دعا کریں۔

نوافل سے فارغ ہونے کے بعد
درود خضری ۱۰۰ مرتبہ

یاحی یاقیوم ۱۰۰ مرتبہ
پھر آلتی پالتی مارکر بیٹھ جائیں یا جس طرح التحیات میں بیٹھتے ہیں اسی انداز میں بیٹھ جائیں اور تصور کریں کہ آپ اللہ تبارک وتعالیٰ آپکو دیکھ رہا ہے اسی دھیان میں کم از کم ۲۰ منٹ بیٹھے رہیں ۔
اس کورس کا مقصد وسوسوں سے نجات پاکر اپنے قلب کو روشن کرنا نور الاہی کا دیدا کرنا اور رسولِ پاک ﷺ کی زیارت سے  اپنے ایمان کو مالامال کرنا ۔

Drood Deedar

Drood e Khizri

تنبیہ :

رسول اللہ ﷺ نے اس بات کو سخت ناپسند فرمایا کہ ہم پیاس یا اس طرح کی کوئی بدبودار چیز کھا کر اللہ کے گھر میں چلیں جائیں بلکہ حکم فرمایا کہ اللہ کے گھر سے دور رہو جب تک کہ منہ سے بدبوء ختم نہیں ہو جاتی، اور اگر آپ اپنے گھر میں اعتکاف کرتی ہیں (یہ اجازت صرف عورتوں کو ہے ،مرد صرف اور صرف مسجد میں ہی اعتکاف کر سکتے ہیں ) تب بھی آپ اعتکاف کے دوراں خدا کی مہمان ہوتی ہیں لحاظا اس طرح کی چیزیں کھانے سے احتیاط برتیں ، خصوصا آج کل افطار میں چھولے کھانے کا احتمام زیادہ کیا جاتا ہے جس میں کچی پیاز بھی شامل ہوتی ہے ۔  لحاضا اس طرح کے کھانوں سے  پرہیز کریں ۔

ہمیں پہلا حکم کیا دیا گیا تھا

انسانی تاریخ پر ایک دور ایسا بھی گذرا ہے جب وہ ناقابلِ ذکر شے تھا وہ بس خدا کے ارادوں میں بستا تھا پھر خدا باری تعالیٰ نے اسے پہلی مرتبہ پیدا کیا حضرت آدم ؑ سے لیکر دنیا میں آنے والے آخری انسان تک جتنے بھی انسان ہیں وہ بہ یک وقت پیدا کردیئے گئے اور اللہ رب العزت ان سے مخاطب ہوا :

الست بربکم ۔ قالوبلیٰ

ترجمہ : کیا میں تمہارا رب نہیں ہوں ۔ تو انہوں نے کہا جی ہاں (آپ ہمارے رب ہیں )

یہ انسان کی اپنے رب کے ساتھ پہلی ملاقات تھی ۔

اس آیت کریمہ پر غور کرنے سے معلوم پڑتا ہے کہ انسان نے اپنے رب کو دیکھا۔ اسکی آواز سنی ۔ اسے پہچانا ۔ اور تب اقرار کیا : جی آپ ہی ہمارے رب ہو۔
لیکن انسان کو ابھی تک یہ مادی جسم () نہیں دیا گیا تھا ، وہ محض روح کی شکل میں موجود تھا ، پھر ایک روح کے لئے مادی جسم تیار کیا گیا اور اسکا نام آدم رکھا جو کہ اس دنیا میں تمام انسانوں کے والد کی حیثیت رکھتے ہیں ۔

چونکہ قصہ آدمؑ تو ہم سب نے کئی بار سن رکھا ہے کہ حضرت آدم ؑ کیسے پیدا کیئے گئے اور پھر شیطان نے انہیں جنت سے کیسے نکالا اور پھر کس طرح وہ زمین پر بسنا شروع ہوئے ، لیکن ہمارا مقصد تو درحقیقت وہ پہلا حکم جاننا ہے جو کہ انسانوں کو مجموعی طور پر دیا گیا تھا  ، اس لئے وہ تمام باتیں جو عموماَ ہر مسلمان نے سن رکھی ہونگی وہ مختصراَ لکھتا جارہا ہوں کہ پڑھنے والوں پر گراں بھی نہ گذرے اور آپکو اندازا بھی ہوتاجائے ۔

آئیے موضوع کی طرف

انسان کو جو سب سے پہلا اجتماعی حکم دیا گیا تھا جس میں ہمارا اس دنیا میں آنے کا راز پہناں ہے سورہ البقرہ کی آیت نمبر 38 اور 39 میں بیان کیا گیا ہے ۔

قُلۡنَا ٱهۡبِطُواْ مِنۡہَا جَمِيعً۬ا‌ۖ فَإِمَّا يَأۡتِيَنَّكُم مِّنِّى هُدً۬ى فَمَن تَبِعَ هُدَاىَ فَلَا خَوۡفٌ عَلَيۡہِمۡ وَلَا هُمۡ يَحۡزَنُونَ (٣٨) وَٱلَّذِينَ كَفَرُواْ وَكَذَّبُواْ بِـَٔايَـٰتِنَآ أُوْلَـٰٓٮِٕكَ أَصۡحَـٰبُ ٱلنَّارِ‌ۖ هُمۡ فِيہَا خَـٰلِدُونَ (٣٩)

ہم نے فرمایا کہ تم سب یہاں سے اتر جاؤ جب تمہارے پاس میری طرف سے ہدایت پہنچے تو جنہوں نے میری ہدایت کی پیروی کی ان کو نہ کچھ خوف ہوگا اور نہ وہ غمگین ہوں گے (۳۸) اور جنہوں نے انکار کیا اور ہماری آیتوں کو جھٹلایا، وہ دوزخ میں جانے والے ہیں (اور) وہ ہمیشہ اس میں رہیں گے (۳۹)

چونکہ اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں کہ جس نے میری ہدایت کی پیروی کی ، لیکن یہاں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہدایت ہے کیا اور اسکی پیروی کیوں کی جائے ؟

یوں توہدایت کی معنیٰ رہنمائی کے ہیں لیکن مذہبی معاملے میں اس سے مراد کلامِ خداواندی ہے جوکہ بندوں کی خیروبرکت اور انہیں جنت کا راستہ دکھانے اور اپنے رب سے آشنا کرنے کے لئے نازل کیا جاتا رہا ہے ۔ اور اپنے رب سے آشنا کرنے کے لئے نازل کیا جاتا رہاہے ، اور اس کلام کا نزول ہمیشہ کسی نہ کسی انسان پر ہی ہوا ہے مختلف ادوار میں مختلف انسانوں پر یہ کلام نازل ہوتا رہا ہے جنہیں ہم نبی یا رسول کہتے ہیں وہ جس دور میں نازل ہوتا صرف اسی دور کے لوگوں کے لئے ہوتا یوں یہ سلسلہ چلتا رہا اور انسان ترقی کے مراحل سے طے کرتا ہوا آخر اس قابل ہوگیا کہ اب انہیں جامع شکل میں قوانیں سکھادیئے جاتے کہ جس کے ذریعے وہ اپنی اصلاح کرتا رہے۔ دنیا میں پرامن زندگی جیئے اور اسے اپنے رب کی معرفت حاصل ہو ۔ اور وہ اس دنیا میں رہتے ہوئے اپنی روح کو جنت میں رہنے کے قابل بنادے ۔
لحاظا حضرت محمد ﷺ  کو قرآن مجید سے نوازا گیا یہ اس سلسلے کی آخری اور جامع  کتاب قرار پائی۔

لحاظا بنی نوعِ انسانی کے لئے اس وقت سے لیکر قیامت تک واحد اور مستند ہدایت قرآن مجید ہی ہے ۔ لحاظا اب ہمیں اس ہدایت کی پیروی کرنی چائیے تب ہی ہم خوف و غم سے نجات پاسکیں گے تب ہی ہم جنت میں رہنے کے لائق ہوپائیں گے اور تب ہی ہمیں اپنے رب کی معرفت حاصل ہوگی ۔
ا

ور یہ ہی وہ پہلا حکم ہے جو انسانوں کو دیا گیا تھا ، تاکہ وہ کلامِ خداوندی پر عمل پیرا ہوکر خوف و غم سے نجات پائے ، اور ایک پرسکو ن زندگی جیئے۔

شیطان سے انٹرویو

میرے ایک دوست جنہیں بچپن سے ہی منفرد صحافی بننے کا شوق تھا اس لئے وہ ہمیشہ ایسے انٹرویوکرتا رہتا ہے کہ جن تک پہنچنا جان جوکھم میں ڈالنے کے مترادف ہے ۔ اور مزے کی بات تو یہ کہ آج تک انکا ایک بھی انٹرویو کسی اخبار یا ٹی وی پر نشر نہیں ہو پایا ۔ اور ہو بھی کیسے۔ کس نے اپنی دکان بند کرنی ہے ۔ آپ ہی سوچیں اگر آپ کسی اخبار کے مالک ہوتے اور میرے وہ دوست آپکے پاس ہٹلر کا انٹرویو لے آتے جو انہوں نےجون 2011 میں کیا ہو تو۔ کیا آپ وہ انٹرویو شایع کرنے کا رسک لیں گے ؟؟؟؟؟

میرے خیال میں تو کبھی بھی نہیں ۔ کیوں کہ آپ اپنا اخبار بند کرنےکی خواہش کیوں کرے گیں ۔ آپ کیوں چاہیں گے کہ جب آپ دفتر سے گھر جائیں تو بچے آپکو پاگل ہے پاگل کہہ کر پتھر ماریں ۔

خیر یہ جناب پہلے بھی میرے پاس دو بار آچکے ہیں کہ میں انکے انٹرویو اپنی ویب سائٹ پر شایع کروں ، لیکن مینے انکو جیسے تیسے ٹال دیا ، لیکن اب کی بار تو جناب نے ہلنے بھی نہیں دیا کہ جب تک میں انکا انٹرویو ٹائپ کرکے پڑہنے والوں کو بور نہ کردوں وہ ہلنے والے نہیں ۔  اس لئے مہربانی ہوگی کہ آپ مجھ پر غصہ کرنے کی بجائے میری مجبوری کو سمجھ گئے ہونگے ۔

ارے ہاں میں تو باتوں باتوں میں اپنے اس دوست کا تعارف کرانا ہی بھول گیا۔ کیا پتہ کل کسی اخبار میں اسکا انٹرویو شایع ہوجائے کم از کم نام تو آپکے ذہن میں ہونا چائیے کہ کہیں خواہ مخواہ میں آپ اپنا قیمتی وقت ضایع کربیٹھیں ۔ لیجیئے جی ، جناب کا اسمِ گرامی امل ہے ۔ حالانکہ اسکے گھروالوں نے اسکا نام بڑے پیارسے انمول رکھا تھا لیکن وہ ہم جیسے دوستوں میں امل کے نام سے مشہور ہوگیا ہے اب تو وہ اپنا نام بھی امل ہی بتاتا پھرتا ہے ۔

اب کی بار انہوں نے بدنامِ زمانہ جن ، جسکا نام عزازیل ہے اور جسے ہم شیطان کے نام سے جانتے ہیں ، اسکا انٹرویو کیا ہے ۔

انٹرویو

امل : رمضان کے مہینے میں تمہیں کہاں قید کرکے رکھتے ہیں ؟
شیطان : تمہیں کیا لگتا ہے مجھے کسی جیل میں رکھتے ہونگے ؟
امل سوچتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو پھر کہاں رکھتے ہیں ؟
شیطان : تم اتنےپڑھے لکھے ہوکر بھی ایسی سوچ رکھتے ہو ؟

امل خوش ہوتے ہوئے کرسی پر تن کر بیٹھا ، بچارے کو پہلی بار کسی نے پڑھا لکھا کہا تھا ۔۔۔۔۔ حالانکہ بچارے کو پتہ ہی نہیں تھا کہ شیطان اسے چکمہ دے رہا ہے ۔ امل بولا۔ تو آپ ہی سمجہائیں؟ امل کے لہجے میں تمیز آگئی وہ بھی شیطان کے لئے J

شیطان : نوجوان میں جہاں ہوں وہیں رہتا ہوں بس میری طاقت ختم کردی جاتی ہے ۔
بچارے امل کی خوشی دیکھنے کی تھی اسے ذرا بھی خیال نہ رہا کہ جوانی تو کبھی اسکے قریب سے ہی نہیں گذری تھی اسے اسکی نانی مان نے بچپن میں ہی دعا دی تھی کہ اللہ تجھے بوڑھا کرے ، پھر ہوا یوں کہ وہ بچپن کے بعد فورن ہی بوڑہے ہوگئے تھے اب تو محلہ کی دادیاں بھی اس سے پردہ کرتی ہیں ۔ لیکن یہ پھر بھی شیطان کی بات میں آگیا اور خوشی سے سینہ تان لیا۔

امل : آپ اپنی باتیں لوگوں کے اذہان میں کیسے ڈالتے ہیں؟
شیطان : چھوڑو شھزادے ۔ یہ تم کیسے فضول کے سوالوں میں آگئے ۔ سنو۔  تم جس لڑکی کے پیچھے روز کالج کے باہر کھڑے رہتے ہو اسے گورے چٹے لڑکے اچھے لگتے ۔ اور تم اپنی حالت دیکھو کیا کردی ہے ؟ زندگی پڑی ہے داڑہی رکھ لینا ۔ ایسی بھی کیا جلدی ہے ۔ ابھی تو آپکی زندگی میں رنگ ہی کہاں جما ہے ۔ ابھی تو آپنے زندگی کی رنگ رلیاں ہی کہاں دیکھی ہیں ۔

امل شیطان کی باتوں میں آتا گیا ۔ ابھی تو یہ ٹھان کر بیٹھا ہے کہ میں اسکا انٹرویو جلدی شایع کروں تاکہ  وہ جلد داڑھی منڈوا سکے،پھر اسے بال بھی تو سیاہ کرنےہیں ، کل سے نئی زندگی کا آغاز جو کرنا ہے ۔ خیر آپ فکر نہ کریں مینے اسکے بچوں کو اطلاع کردی ہے وہ آتے ہی ہونگے اِسے لینے کے لئے ،

آپ اپنا خیال رکھنا اور یہ مت بھولنا کہ شیطان امل کی طرح ہمیں بھی اسی انداز میں گمراہ کرتا ہے ۔ اگر خدانخواستہ آپکی شیطان کے ساتھ ملاقات ہوجائے تو اعوذ بااللہ من الشیطان الرجیم ضرور پڑھ لیجئے گا ۔

اعتکاف کا طریقہ

اللہ تعالیٰ نے مسلم امہ کو جن نعمتوں سے نوازا ہے ان میں سے شب قدربھی ایک ہے ، شب قدر ہمیں کس طرح عطا کی گئی اس سے وابستہ تمام معلومات ہم ہر سال ماہِ رمضان میں جمع کے خطبات میں سنتے رہتے ہیں ، اس رات کو تلاش کرنے کے لئے نبی پاک ﷺ نے ہمیں اعتکاف کا راستہ دکھایا کہ ہم میں سے جو کوئی بھی اس مبارک رات کو تلاش کرنا چاہے وہ رمضان مبارک کے آخری عشرہ بحالتِ اعتکاف مسجد میں ٹھرے اپنے باقی کے صوم و صلواہ وہیں ادا کرے ۔

اعتکاف ۲۰ رمضان المبارک کی شام سے شروع کیا جاتا ہے ، آپ اپنی ضرورت کی تمام چیزیں اپنے ساتھ لے جا سکتے ہیں ، لیکن اسکا مقصد یہ ہرگز نہیں آپ اپنا لیپ ٹاپ ، آی فون یا اس طرح کی چیزیں لے جائیں ،

شب قدر طاق راتوں میں تلاش کی جاتی ہے 21،23، 25، 27، 29  ۔ لیکن اپنی عبادت کا سلسلہ باقی کی راتوں میں بھی پوری طاقت سے قائم رہے ۔

جونہی عید کا چاند نظر آئے ۔ اب آپ اپنا اعتکاف مکمل کر چکے ہیں ۔

چونکہ ہم بخوبی جانتے ہیں کہ اعتکاف کا مقصد شب قدر کو تلاش کرنا ہے ، لیکن ہم شب قدر کو کیسے تلاش کریں اس کی پہچان کیا ہے ، اگر وہ رات ہمیں مل بھی جائے تو اسے کیسے پہچان سکتے ہیں؟

شب قدر کی پہچان

سورہ القدر میں اس مبارک رات کی پہچان کچھ یوں بتائی گئی ہے

ملائکہ اور ارواح اللہ کی اجازت سے نازل ہوتے ہیں
اور یہ رات فجر تک سلامتی والی ہوتی

چونکہ ارواح اور ملائکہ تو ہر وقت اس دنیا سے وابستہ رہتے ہیں ، لیکن اس رات انکی آمد بڑہ جاتی ہے یا ہم یوں کہہ لیں کہ یہ رات خصوصا فرشتوں اور روحوں کے زمین پر آنے کی رات ہے ،  لیکن اب پھر وہی مسئلا سامنے آجائے گا کہ ہم فرشتوں اور روحوں کو کیسے دیکھ سکتے ہیں ؟

ظاہر سی بات ہے کہ روحانی ارتقا کے بغیر کوئی بھی انسان روحوں اور فرشتوں کو نہیں دیکھ سکتا ، روحانی ارتقا کے لئے ہمارے بزرگانِ دین نے بہت سے عمدہ کورسس بنائے ہیں ۔  جن پر عمل کرنے کے بعد ہماری نگاہ میں وہ وسعت آجاتی ہے جس سے کہ ہم روحوں اور فرشتوں کو دیکھ سکتے ہیں ، نہ صرف دیکھ سکتے ہیں بلکہ انسے بات چیت بھی کرسکتے ہیں ،
اب ایک اور مسئلا سامنے آجائے گا کہ یہ کورسز کہاں کرائے جاتے ہیں اور کون یہ کورس کراتا ہے اور اس کی فیس کیا ہے؟ سچ پوچھیں تو اس معاملے میں ، میں آپکی کوئی بھی مدد نہیں کرسکتا ، کیوں کہ میں نہیں جانتا کہ آپ کس شھر سے تعلق رکھتے ہیں وہاں کوئی بزرگ ہے بھی کہ نہیں ۔

اگر کوئی دوست آپکو ایسے کسی بزرگ کا مشورہ دے تو آپ اسے کیسے پہچان سکتے ہیں ؟ اس معاملے میں کچھ باتوں کا خیال رکھیں کہ کیا وہ بزرگ شریعت کا پابند ہے اگر ہے تو پھر ایک اور بات جو کہ بہت ہی اہم ہے اور اس کے بغیر کوئی شخص ولی بن بھی نہیں سکتا اور وہ ہے تقویٰ ، تو اگر وہ بزرگ متقی بھی ہے تو اب آپ اسے اپنا مسئلا بتائیں اور پوچھیں کیا وہ آپکی رہنمائی کرسکتا ہے، اگر ہاں تو اب ٹھیک ہے آپ اس پر بھروسہ کرسکتے ہیں ۔ انشااللہ آپکو ضرور فائدہ ہوگا وگرنہ اس راستے پر لوٹنے والوں کی بھی کوئی کمی نہیں۔

اگر آپکو یہ سب کرنا بہت مشکل معلوم ہو رہا ہے ، تو آپ اپنی نماز کو بہتر بنائیں یقین جانیئے نماز سے بہتراور کامل مشق اور کوئی نہیں،

نماز میں خیالات کو کیسے روکیں؟

اگر آپ اپنی روحانی ارتقا چاہتے ہیں تو اس ضمن میں نماز آپکے لئے بہت کارآمد ثابت ہوگی انشااللہ
جب آپ اس کوشش میں کامیاب ہوجائیں گے تو انشااللہ بحالت نماز آپ شب قدر کو پہچان لیں گے

دیدارِمصطفیٰ ﷺ کا طریقہ

رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں ایک طرف شیطان قید کیا جاتا ہے تو دوسری طرف اللہ تبارک و تعالیٰ کی رحمتوں کی بارش ہر روز و شب جاری وساری رہتی ہے ۔ سبحان اللہ کیا کہنے ہیں ، یوں تو عام دنوں میں دورکعت نماز ادا کرنے کے لئے مردود شیطان سے جنگ کرنی پڑتی تب کہیں بات بنتی ہے اور اس ماہ میں ذرا سی ہمت تمام شب قیام کرنے لئے کافی ہوجاتی ہے۔

تو کیوں نہ اس مبارک ماہ کے فیوض و برکات کو جمع کرنے کی تیاری ابھی سے ہی شروع کردینی چائیے۔  آج ہم ایک ایسے  عمل کی تیاری کرنے والے ہیں جس کی تمنا تو ہر مسلمان کے دل میں ہونی چائیے ، اور ہو بھی کیوں نا، کیا ایسا ہو سکتا ہے کہ آپ کسی سے محبت کرتے ہوں اور اسے دیکھنا بھی نہ چاہتے ہوں ؟ ذرا اس شخص کی کیفیت کا اندازا کریں جسنے اپنے بچپن میں یا پیدائش سے قبل اپنے والد کو کھودیا ہو اور بدقسمتی سے اسکے گھروالوں کے پاس اسکے والد کی کوئی تصویر بھی نہ ہو اور وہ اپنے والد کو دیکھنا چاہتا ہو لمبے عرصے بعد اسے پتہ چلے کہ فلاں جگھ پر ایک شخص رہتا ہے اسکے پاس میرے والد صاحب کی تصویر موجود ہے ۔۔۔۔  تو آپکو کیا لگتا ہے کہ وہ اس تصویر کو دیکھنے کے لئے آخری حد تک کوشش نہیں کرے گا ؟؟؟؟؟؟؟

جی بلکل کرے گا

اب اس ہستی کا تصور کریں جو ہمیں ماں اور باپ سے زیادہ پیار کرتی ہے ، جسکی محبت کی گواہی خود قرآن دیتا ہے ۔ اور جو ہر مسلمان کو اپنے ماں باپ یار دوست یہاں تک کہ اپنی جان سے بھی کئی گنا زیادہ عزیز ہے تو یہ کیسے ممکن ہے کہ پھر ایک مسلمان اسے دیکھنے کی خواہش ہی نہ کرے ؟

اگر آپ تیار ہیں اور نبی پاک ﷺ کی زیارت کے لئے دل میں شوق بھی خوب ہے تو طریقہ سن لیجئے
چونکہ رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں آپ سارا دن روزے میں ہونے کی وجہ سے خود کو گناہوں سے روکتے رہتیں ہیں اور رات کو تراویح میں لمبے قیام کے بعد اللہ تبارک وتعالیٰ کی رحمتوں سے بھر پور ہوچکے ہوتے ہیں ، خدا کی رحمتیں آپ پر برس رہی ہوتی ہیں ، گناہ آپ سے دور ہوتے ہیں ۔

لحاظا تمام نیک اعمال سے فارغ ہوکر ایک تازہ وضو کرلیں

آپکا بستر اور کپڑے پاک ہوں

کعبہ اللہ کی جانب رخ کرلیں

اب ایک تسبیح پر 313 مرتبہ درود دیدار پڑہیں

a

اسکے بعد نہایت ئی ادب و احترام کے ساتھ اللہ تبارک و تعالیٰ سے رسولِ پاک ﷺ کی زیارت کے لئے دعا کریں اور وہیں بستر پر سنت کے طریقے کے مطابق ، کسی سے بات کیئے بغیر سوجائیں  ۔ انشاٗ اللہ تعالیٰ اگر آپکے نصیب میں یہ دولت لکھی ہے تو اس رمضان المبارک میں آپکو حضرت محمد ﷺ کی زیارت نصیب ہوجائے گی ۔

لیکن یہ خیال رہے کہ آپکی جانب سے کسی کی بھی دل آزاری نہ ہو والدیں کی خدمت کریں  ، اور جتنا ہو سکے صدقہ خیرات کی کثرت کریں

اللہ تعالیٰ آپکو نبی پاک ﷺ کی زیارت سے مالا مال فرمائے آمیں ثم آمیں
ہمیں بھی اپنی نیک دعاوں میں یاد رکھیئے گا

یہ بلکل بھی ضروری نہیں کہ آپ مندرجہ بالا طریقہ کے مطابق تیاری کریں ، اگر آپکے نظر میں کوئی بزرگ ہے تو آپ اسکے مشورے کے مطابق بھی تیاری کر سکتے ہیں ۔ اللہ تعالیٰ آپکو برکتیں عطا فرمائے ۔آمیں ثم آمین

افطار کے بعد سُستی کیوں ہوتی ہے؟

روزے کے بیشمار فوائد ہیں جن میں اپنی خواہشات پر قابو پانا بھی شامل ہے، تاکہ ہم کئی ذہنی بیماریوں سے بچ سکیں ،ممکن طور پر آپنے مشاہدہ کیا ہو کہ لوگوں کی پریشانیوں کی بنیاد خواہشات پر مبنی ہوتی ہے میں یہ نہیں کہتا کہ پریشانی کہ وجہ صرف اور صرف خواہشات ہی ہیں لیکن اکثریت کی بنا پر دیکھا جائے تو پریشانی کا بنیادی کارن خواہشات کا پالنا ہے ۔ آپکو رہنے کے لئے گھر چائیے یہ آپکی ضرورت ہے لیکن وہ گھر ڈفینس میں ہو یہ آپکی خواہش ہے ۔ ٹھیک اسی طرح اگر آپ اپنی ضرورتوں کا جائزہ لیں گے تو ان میں بیشمار خواہشات چُھپی ہوئی ملیں گی جو آپکی پریشانی میں اضافہ کرتی ہوئی نظر آئیں گی ۔

اور اسی طرح سے اگر آپ اپنے اردگرد میں نظر دوڑائیں گے تو بیمار لوگوں میں اکثریت ایسے لوگوں کی ملے گی جو کھانے پینے میں بے احتیاطی سے کام لینے والے ہونگے ، ان میں سے غرباء کے لئے تو آپ اپنی یہ رائے بھی قائم کرسکتے ہیں کہ بھئی یہ ان کی مجبوری ہے لیکن امراء کے لئے آپکے پاس ایک ہی وجہ بچے گی اور وہ ہے خواہشات ۔ انکو کھانے کی خواہش اسپتال کے چکر لگوا رہی ہوتی ہے ۔ معلوم ہوا جی صاحب میٹھے کے بڑے شوقین تھے آجکل شگر بڑہ گئی ، مرچی اور کڑہی کے دلدادہ تھے آجکل معدہ میں السر لئے پھرتے ہیں ، اور مزے کی بات تو یہ ہے کہ دل ٹوٹنے پر اتنے عاشق نہیں مرتے جتنے کہ کھانے کے چکر میں لوگ ہارٹ اٹیک سے مرجاتے ہیں ۔ گویا کہ خواہش ادھوری رہ جانے کے بعد بھی ہم زندہ رہ پاتے ہیں پر پوری ہوجانے کے بعد ہارٹ اٹیک ہمیں جینے نہیں دیتا ۔ سچ پوچھیں مینے آج تک نہیں سنا کہ دل ٹوٹنے کے بعد کسی نے بائےپاس کرایا ہو ۔ چلیں آپ خودہی بتائیں ۔۔۔۔۔۔ کیا آپنے کبھی سنا کہ ایک عاشق نے اپنے معشوق کی جانب سے کی جانے والی بیوفائی کے نتیجے میں دل ٹوٹنے کے بعد اسکی سرجری کرالی یا اس کا بائے پاس کرالیا ۔

خیر اب ہم اپنے اصل موضوع کی طرف لوٹتے ہیں ۔ ہمیں ایک بات ذہن نشین کرلینے چائیے کہ روزہ عبادت کے علاوہ خواہشات پر قابو پانی کی ایک بہترین مشق بھی ہے۔ لیکن مشق پوری ہونے کے بعد ہم آزاد نہیں ہوتے کہ جو جی میں آئے کریں جیسے روزہ میں آپ جھوٹ نہیں بول سکتے ، چوری نہیں کرسکتے ، کسی کو تکلیف نہیں دے سکتے ،زنا نہیں کرسکتے ، گانے نہیں سن سکتے ، مجازی شاعری فلمیں ، وغیرہ تو یہ سب کچھ اس وقت بھی آپ پر حرام ہوتا ہے جس وقت آپ افطار کر رہے ہوتے ہیں یا کرچکے ہوتے ہیں ، وگرنہ روزہ کے بہت سے فوائد سے ہم محروم رہ جاتے ہیں ۔ جس طرح ہم کسی ڈاکٹر کے پاس علاج کے لئے جاتے ہیں تو وہ ہمیں دوائی کے ساتھ ساتھ پرہیز کا بھی بتاتا ہے کہ ہمیں کن اشیاء سے پرہیز کرنی ہے ، اگر ہم پرہیز نہیں کریں گے تو علاج  کارگر  ثابت نہیں ہوپائےگا۔ ٹھیک اسی طرح سے روزہ کی مشق  کےدوران بھی ہم پر پرہیز لازم ہوتی ہوتی ہے ، لیکن افطار تک نہیں بلکہ اسکے بعد بھی ، اگر آپ اپنے رب سے وابستگی رکھتے ہیں تو آپکو یہ بھی ذہن نشیں کرلینا چائیے کہ روزہ چاہے افطارہوگیا ہو لیکن رمضان تو اب بھی موجود ہے اسکا احترام بھی ایک مسلمان پر لازم ہے ، لحاظا وہ کام جو روزے میں آپکو برے معلوم ہوں ان سےبعد میں بھی پرہیز گریں ۔

اکثر دوستوں کی یہ شکایت ہوتی ہے کہ رمضان میں افطار کرنے کے بعد جسم میں طاقت نہیں رہتی ۔ اسکی صحیح وجہ تو کوئی ڈاکٹر ہی بتاسکتا ہے البتہ میں افطار کا صحیح طریقہ ضرور بتا سکتا ہوں جس سے آپکے جسم کی اسٹیمینا برقرار رہ سکے ۔

افطار کا وقت دعا کی قبولیت کا وقت ہوتاہے لحاظا اپنےرب سے جو مانگنا ہے مانگو اسکے بعد جونہیں افطار کا وقت ہوجائے ، کھجور یا پانی سے روزہ افطار کریں ،  لیکن کھجور یا پانی کی مقدار کم رکھیں، اور مغرب نماز کی ادائگی کے لئے روانہ ہوجائیں بعد نماز مغرب آپ اپنے دسترخوان پر آجائیں لیکن یہاں بھی نبی پاکﷺ کی سنت کی پیروی کرتےہوئے کھانا کھائیں پیٹ بھر کر کھانے سے احتیاط برتیں ، آپکو کھانے سے کوئی نہیں روکے گا کھانا آپکا ہے تھوڑا تھوڑا کرکے کھاتے رہیں ساری رات پڑی ہےلیکن ایک ساتھ سارا کھانا کھانے کی کوشش۔ ایک تو  نبی پاک ﷺ کی پیروی کی بھی نفی ہے اور پھر اپنی صحت کے لئے بھی نقصاندہ ،

ساتھ ہی بہتر تو یہ ہوگا کہ افطار کے سلسلے میں کسی اچھے ڈاکٹر سے رجوع کریں کہ آپکے لئے کیا چیزیں بہتر رہیں گی جو آپکی توانائی کو بھی بحال رکھیں اور بیمار ہونے سے بھی محفوظ رکھیں ۔

%d bloggers like this: